(–\ ﷽ /–)

Humne Kanton Me Bhi Gulzar Khila Rakha Hai-( ہم نے کانٹوں میں بھی گلزار کھلا رکھا ہے؛ )

  • عبداللہ بن محمد جہادی مہم کے سلسلے میں، مصر کے ایک ساحلی علاقے میں مقیم تھا، ٹہلتا ہوا ایک بار ساحل سمندر جا نکلا ، وہاں دیکھا کہ خیمہ میں ہاتھ پاؤں سے معزور اور آنکھوں کی بینائی سے محروم ایک شخص پڑا ہوا ہے ، اس کے جسم میں صرف اس کی زبان سلامت ہے ، ایک طرف اس کی یہ حالت ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اور دوسری طرف وہ بآواز بلند کہہ رہا ہے :

” میرے رب ! مجھے اپنی نعمتوں پر شکر کی توفیق عطا فرما، مجھے تو نے اپنی مخلوق میں سے سوں پر فضیلت اور فوقیت بخشی ہے، اس فوقیت پر مجھے اپنی حمد و ثناء کی توفیق عطا فرما

  • Abdullah Bin Muhammad Jihadi Maham Ke Silsile Me, Misr Ke Sahili ilaqe Me Muqim Tha, Tahelta Hua Ek Baar Sahil Samandar Ja Nikla, Waha Dekha Ke Kheme Me Hath Paon Se Mazur Aur Aankho Ki Binayi Se Mehroom Ek Shakhs Pada Hua Hai, Uske Jism Me Sirf Uski Zuban Salamat Hai, Ek Taraf Uski Ye Halat Hai —– Aur Dusri Taraf Wo BaAwaz Buland Keh Raha Hai :

” Mere Rab ! Mujhe Apni Nemato Par Shukr Ki Taufiq Aata Farma, Mujhe Tune Apni Makhluq Me Se Bohot Sun Par Fazilat Aur Fauqiyat Bakhshi Hai, Us Fauqiyat Par Mujhe Apni Hamd u Sana Ki Taufiq Aata Farma” –

  • عبداللہ نے یہ دعا سنی تو اسے بڑی حیرت ہوئی، ایک آدمی ہاتھ پاؤں سے معزور ہے، بینائی سے محروم ہے، جسم میں زندگی کی تازگی کا کوئی اثر نہیں اور وہ اللہ سے نعمتوں پر شکر کی دعا مانگ رہا ہے، اس کے پاس آکر سلام کیا اور پوچھا :

” حضرت ! آپ اللہ تعالی کی کس نعمت اور فوقیت پر شکر اور حمد و ثناء کی توفیق کے خواستگار ہیں “؟

  • Abdullah Ne Ye Dua Suni To Use Badi Hairat Hui, Ek Aadmi Hath Paon Se Mazur Hai, Binayi Se Mehroom Hai, Jism Me Zindagi Ki Tazgi Ka Koi Asar Nahi Aur Wo Allah Se Nemato Par Shukr Ki Dua Mang Raha Hai, Uske Paas Aakar Salam Kiya Aur Poocha :

” Hazrat ! Aap Allah Tala Ki Kis Nemat Aur Fauqiyat Par Shukr Aur Hamd u Sana Ki Taufiq Ke Khwast’Gar Hai “?

معزور شخص نے جواب میں فرمایا اور خوب فرمایا:

Mazur Shakhs Ne Jawab Me Farmaya Aur Khoob Farmaya:

  • ” آپ کو کیا معلوم میرے رب کا میرے ساتھ کیا معاملہ ہے، بخدا، اگر وہ آسمان سے آگ برسا کر مجھے راکھ کردے، پہاڑوں کو حکم دے کر مجھے کچل دے، سمندروں کو غرق کرنے کے لئے کہدے اور زمین کو مجھے نگلنے کا حکم دے تو میں کیا کرسکتا ہوں، میرے ناتواں جسم میں زبان کی بے بہا نعمت کو تو دیکھئے کہ یہ سالم ہے، کیا صرف اس ایک زبان کی نعمت کا میں زندگی بھر شکر ادا کر سکتا ہوں “؟
  • “Aapko Kya Maloom Mere Rab Ka Mere Sath Kya Mamla Hai, Bakhuda, Agar Wo Aasman Se Aag Barsa Kar Mujhe Rakh Kar De, Pahadon Ko Hukm De Kar Mujhe Kuchal De, Samandaron Ko Mujhe Garq Karne Ke Liye Keh De Aur Zamin Ko Mujhe Nigalne Ka Hukm De To Mai Kya Kar Sakta Hu, Mere Natawan Jism Me Zuban Ki Be Baha Nemat Ko To Dekhiye Ke Ye Salim Hai, Kya Sirf Is Ek Zuban Ki Nemat Ka Mai Zindagi Bhar Shukr Ada Kar Sakta Hoon”?
  • پھر فرمانے لگے ” میرا ایک چھوٹا بیٹا میری خدمت کرتا ہے، خود میں معزور ہوں، زندگی کی ضروریات اسی کے سہارے پوری ہوتی ہیں لیکن وہ تین دن سے غائب ہے، معلوم نہیں کہ کہاں ہے آپ اس کا پتہ کر لیں تو مہربانی ہوگی “_
  • Fir Farmane Lage” Mera Ek Chota Beta Meri Khidmat Karta Hai, Khud Mai Mazur Hu, Zindagi Ki Zaruriyat Usi Ke Sahare Puri Hoti Hain Lekin Wo Teen Din Se Gaib Hai, Maloom Nahi Ke Kaha Hai Aap Uska Pata Karle To Meher’Bani Hogi”_
  • ایسے صابر و شاکر اور محتاج انسان کی خدمت سے بڑھ کر اور سعادت کیا ہو سکتی ہے،
  • Aaise Sabiro Shakir Aur Mohtaj Insan Ki Khidmat Se Badh Kar Aur Saadat Kya Ho Sakti Hai,
  • عبداللہ نے بیابان میں اس کی تلاش شروع کی تو یہ درد ناک منظر دیکھا کہ مٹی کے دو تودوں کے درمیان ایک لڑکے کی لاش پڑی کوئی ہے جسے جگہ جگہ سے درندوں اور پرندوں نے نوچ رکھا ہے، یہ اسی معزور شخص کے بیٹے کی لاش تھی، اس معصوم کی لاش اس طرح بے گور و کفن دیکھ کر عبداللہ کی آنکھوں میں آنسو بھر آئے اور یہ فکر لاحق ہوئی کہ اس کے معزور والد کو اس المناک حادثہ کی اطلاع کیسے دے؟ ان کے پاس گئے اور ایک لمبی تمہید کے بعد انھیں اطلاع کر دی، بیٹے کی وحشتناک موت سے کون ہوگا جس کا جگر پارہ پارہ نہ ہو لیکن،
  • Abdullah Ne Bayaban Me Us Ki Talash Shuru Ki To Ye Dard’Nak Manzar Dekha Ke Mitti Ke Do Todon Ke Darmiyan Ek Ladke Ki Laash Padi Hoi Hai Jise Jagah Jagah Se Darindon Aur Parindon Ne Noch Rakha Hai, Ye Usi Mazur Shakhs Ke Bete Ki Laash Thi, Us Masoom Ki Laash Is Tarah Be Gaur u Kafan Dekh Kar Abdullah Ke Aankho Me Aansu Bhar Aaye Aur Ye Fikr LaHaq Hui Ke Uske Mazur Walid Ko Us ilmnak Hadse Ki ittala Kaise De? Unke Paas Gaye Aur Ek Lambi Tamhid Ke Baad Unhe ittala Kar Di, Bete Ki Wehshat’nak Maut Se Kon Hoga Jis Ka Jigar Para Para Na Ho Lekin,
  • جائز نہیں اندیشۂ جان، عشق میں اے دل!
  • ہشیار! کہ یہ مسلک تسلیم و رضا ہے,
  • Jaiz Nahi Andesha Jaan, Ishq Me Aai Dil!
  • Hushyar ! Ke Ye Maslake Taslim u Raza Hai,
  • خبر سن کر معزور والد کی آنکھوں سے آنسو رواں ہوئے، دل پر غموں کے بادل چھا جائیں تو آنکھوں سے اشکوں کی برسات شروع ہو جاتی ہے، یہ بھی اللہ تعالی کی ایک نعمت ہے کہ غم کا غبار اشکوں میں ڈھل کر نکل جاتا ہے، شکوہ و شکایت کی بجائے فرمانے لگے،:
  • Khabar Sun Kar Mazur Walid Ki Aankho Se Aansu Rawa Hue, Dil Par Gamon Ke Badal Chha Jaen, Tu Aankhon Se Ashkon ki Barsat Shuru Ho Jaati Hai, yah bhi Allah Tala Ki Ek niyamat Hai, Ke Gam ka Gobar Ashko Mein Dhal kar Nikal Jata Hai Shikva Shikayat ki Bajaye Farmane Lage,;
  • حمد و ستائش اس ذات کے لئے ہے، جس نے میری اولاد کو اپنا نافرمان نہیں پیدا کیا اور اسے جہنم کا ایندھن بننے سے بچایا” پھر “اِنَّالِلہ————” پڑھا اور ایک چیخ کے ساتھ سعید روح نے قفس عنصری سے گویا یہ کہتے ہوئی آزادی حاصل کرلی کہ:
  • Hamd u Satayish Us Zaat Ke Liye Hai, Jisne Meri Aulad Ko Apna Nafarman Nahi Paida Kiya Aur Use Jahannam Ka Indhan Banne Se Bachaya” Fir “Inna Lillahi————-” Padha Aur Ek Chikh Ke Sath Saed Ruh Ne Qifs Ansri Se Goya Ye Kehte Hui Aazadi Hasil Karli Ke;
  • اب اے خیال یار نہیں تاب ضبط کی
    بس اے فروغِ برق تجلی کہ جل گئے
    اب کیا ستائیں گی ہمیں دوراں کی گردشیں
    ہم اب حدود سودوزیاں سے نکل گئے،
  • Ab Aye Khayal e Yaar Nahin Tabo Zabt Ki
    Bus Aye Faroge Barq Tajalli Ke Jal Gai
    Ab Kya Satayegi Hamen Dauran Ki Gardishe
    Ham Ab Hudude Sudo’Zaya se Nikal Gaye,
  • ان کی اس طرح اچانک موت پر عبداللہ کے ضبط کے سارے بندھن ٹوٹ گئے اور وہ پھوٹ پھوٹ کر رونے لگا، کچھ لوگ اس طرف نکلے، رونے کی آواز سنی، خیمے میں داخل ہوئے، میت کے چہرے سے کپڑا ہٹایا تو اس سے لپٹ گئے، کوئی ہاتھ چومتا، کوئی آنکھوں کو بوسہ دیتا، ساتھ ساتھ کہے جاتے:
  • Unki Is Tarah Achanak Maut Par Abdullah Ke Zabt Ke Bandhan Tut Gaye Aur Wo Phut Phut Kar Rone Laga, Kuch Log Is Taraf Nikle, Rone Ki Awaz Suni, Kheme Me Dakhil Hue, maiyat Ke Chehre Se kapda Hataya, To Usse Lipat Gaye, Koi Hath Chumta, Koi Aankhon Ko Bosa Deta, Sath Sath Kahe Jate;
  • ہم قربان ان آنکھوں پر جنھوں نے کبھی کسی غیر محرم کو نہیں دیکھا، ہم فدا اس جسم پر جو لوگوں کے آرام کے وقت بھی اپنے مالک کے سامنے سجدہ ریز رہتا، جس نے اپنے رب کی کبھی نافرمانی نہیں کی۔۔۔۔۔۔۔”
  • Hum Qurban in Aankho Par Jinhon Ne Kabhi Kisi Gair Mehram Ko Nahi Dekha, Hum Fida is Jism Par Jo Logon Ke Aaram Ke Waqt Bhi Apne Malik Ke Samne Sajda Rez Rehta, Jis Ne Apne Rab Ki Kabhi NaFarmani Nhi Ki—–“
  • عبداللہ یہ صورت حال دیکھ کر حیران ہورہا تھا، پوچھا” یہ کون ہیں، ان کا کیا تعارف ہے ” کہنے لگے ” آپ ان کو نہیں جانتے؟ یہ رسول اللہ ﷺ کے سچے عاشق اور حضرت ابن عباسؓ کے شاگرد ، مشہور حضرت ابو قلابہ ہیں “-
  • Abdullah Ye Surate Haal Dekh kar Hairan Ho Raha Tha, Poocha” Ye Kon Hai, inka Kya Taruf Hai. ” Kehne Lage ” Aap InKo Nahi Jante? Ye Rasulullahﷺ Ke Sacche Aashiq Aur Hazrat Ibne Abbasؓ Ke Shagird, Mashhor Hazrat Abu Qalabah Hai”-
  • حدیث کا آدنٰی طالب علم بھی حضرت ابو قلابہؒ کے نام سے واقف ہے، صبر واستقامت کے پیکر اور تسلیم ورضا کے بلند مقام کے حامل حضرت ابو قلابہؒ کی تجہیز و تکفین اور نماز و تدفین سے فارغ ہو نے کے بعد عبداللہ رات کو سویا تو خواب میں دیکھا کہ آپ جنت کے باغات میں سیر و تفریح کررہے ہیں، جنت کا لباس زیب تن ہے اور یہ آیت تلاوت فرما رہے ہیں، ( سَلَاْمٌ عَلَیْکُمْ بِمَا صَبَرتُم فَنِعمَ عُقبَی الدَّار ) “صبر کرنے کے سبب تم پر سلامتی ہو اور آخرت کا گھر بہترین ٹھکانہ ہے” عبداللہ نے پوچھا، آپ وہی معزور شخص ہیں “۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فرمانے لگے:
  • Hadish Ka Adna Talib e ilm Bhi Hazrat Abu Qalabahؒ Ke Naam Se Waqif Hai, Sabar u Isteqamat Ke Paikar Aur Taslim u Raza Ke Buland Muqam Ke Hamil Hazrat Qalabahؒ Ki Tajhiz u Takfin Aur Namaz u Tadfin Se Farig Hone Ke Baad Abdullah Raat Ko Soya To Khwab Me Dekha Ke Aap Jannat Ke Bagat Me Ser o Tafrih Karrahe Hai, Jannat Ka libas Zebe Tan Hai Aur Ye Aayat Tilawat Farma Rahe Hai, ( سَلَاْمٌ عَلَیْکُمْ بِمَا صَبَرتُم فَنِعمَ عُقبَی الدَّار )

Sabar Karne Ke Sabab Tum Par Salamati Ho Aur Aakhirat Ka Ghar Behtarin Thikana Hai, Abdullah Ne Poocha” Aap Wahi Mazur Shakhs Hain”? Farmane Lage:

جی ہاں میں وہی شخص ہوں، اللہﷻ کے ہاں چند بلند مراتب اور درجات ایسے ہیں جن تک رسائی مصیبت میں صبر ، راحت میں شکر اور جلوت و خلوت میں خوفِ خدا کے بغیر ممکن نہیں، اللہ تعالی نے اسی صبر و شکر کی بدولت مجھے ان نعمتوں سے سرفراز فرمایا ہے”-

Ji Ha Mai Wahi Shakhs Hu, Allahﷻ Ke Ha Chand Buland Maratib Aur Darjat Aaise Hai Jin Tak Rasayi Musibat Me Sabar , Rahat Me Shukr Aur Jalwat u Khalwat Me Khauf e Khuda Ke Begair Mumkin Nahi, Allah Tala Ne Usi Sabar u Shukr Ki Badaolat Mujhe Un Nematon Se Sarfaraz Farmaya Hai”-

تمام غنچہ و گل داغ دل بنے کیفی،

خزاں نصیب بہاروں سے کیا لیا میں نے،


دل کا ہر داغ تبسم میں چھپا رکھا ہے،

Dil Ka Har Dag Tabassum Me Chupa Rakha Hai,

ہم نے ہر غم کو غم یار بنا رکھا ہے،

Humne Har Gham Ko Gham e Yaar Bana Rakha Hai,

نوک ہر خار سے پوچھو وہ گواہی دیں گے،

Nok Har Khar Se Poocho Wo Gawahi Denge,

ہم نے کانٹوں میں بھی گلزار کھلا رکھا ہے،

Humne Kanton Me Bhi Gulzar Khila Rakha Hai,

خود میرے دل نے تراشے ہیں غموں کے پیکر،

Khud Mere Dil Ne Tarashe Hai Ghamo Ke Paikar,

میرے مولا نے تو ہر غم سے بچا رکھا ہے،

Mere Maola Ne To Har Gham Se Bacha Rakha Hai,

♡♡♡

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s